Monday, January 11, 2016

Spiritual Books

Spiritual Books 
Read Online or Download for free

  1. Mohammad ur Rasoolullah English
  2. Mohammad ur Rasoolullah urdu
  3. Roohani Ilaaj
  4. Telepathy
  5. Sufism
  6. 60 More books
Download Link:  http://ksars.org/books.php



Friday, January 8, 2016

Allah ke supard


الله کے سپرد

خواجہ شمس الدین عظیمی صاحب ،  حضور قلندر بابا اولیاؒء سے بیعت ہونے کے بعد کے ابتدائی دنوں کا احوال بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں ...

 پیر و مرشد نے ایک دن اپنے سامنے بٹھا کر فرمایا ...

" زندگی گزارنے کے دو طریقے ہیں اور وہ دو طریقے یہ ہیں کہ انسان کے اندر اتنی صلاحیت ہو کہ دوسروں سے اپنی بات منوا سکے -  انسان کے اندر اتنی صلاحیت ہو کہ وہ دوسروں کو اپنا ہم ذہن بنا سکے ...

انسان کے اندر یہ صلاحیت ہو کہ صدیوں پرانی روایات کو سینے سے لگاتے ہوئے ان روایات کا تحفظ کرسکے - ان روایات کے جاری و ساری رکھنے کے لئے ساری دنیا سے مقابلہ کرسکے ...

اس طریقے کو دنیا والے خودمختار زندگی کہتے ہیں یعنی جو آپ چاہتے ہیں وہ دوسروں سے منوالیں - دوسرا طریقہ یہ ہے کہ آپ اپنی نفی کردیں یعنی خود مختار زندگی کو داغ مفارقت دے دیں ...

یاد رکھئے انسان کی ساخت اور تخلیق کا قانون یہ ہے کہ الله تعالیٰ نے انسان کو جس فطرت پر پیدا کیا ہے وہ فطرت خود مختار نہیں ہے ...

انسان کی ساخت ہی اس بنیاد پر کی گئی ہے کہ یہ پابند ہوکر زندگی گزارے لہٰذا ضروری ہے کہ خود مختار زندگی سے آپ کنارہ کش ہوجائیں اور اپنے آپ کو الله کے سپرد کردیں - آپ کے اندر یہ صلاحیت نہیں ہے کہ آپ کسی کو اپنا بنالیں - آپ کے اندر یہ صلاحیت بدرجہ اتم موجود ہے کہ آپ دوسرے کے بن جائیں -"

عالی مرتبت بادشاہ

تحریر   : نسیم احمد 
اشاعت  : روحانی ڈائجسٹ جنوری 1992ء 

اگست 1978ء کی وہ مبارک گھڑی مجھ کو آج بھی یاد ہے جب میرے حضرت خواجہ شمس الدین عظیمی نے مجھ سے فرمایا کہ آئیے آج آپ کو حضور قلندر بابا اولیاؒء سے ملوائیں - میں بصد شوق تیار ہوگیا اور ہم حضور قلندر بابا اولیاؒء کے آستانے کی طرف روانہ ہوئے -
 میں راستے بھر اپنے ذہن میں طرح طرح کے تصور قائم کرتا رہا کہ قلندر بابا ایسے ہوں گے ان کی اتنی بڑی داڑھی ہوگی - اس لئے کہ بچپن ہی سے ہمارے ذہن میں یہ بات تھی کہ بزرگ لوگ بہت موٹے ہوتے ہیں جتنی بڑی ان کی داڑھی ہوتی ہے اتنے ہی بزرگ ہوتے ہیں -

غرض یہ کہ قصہ مختصر ہم حضور قلندر بابا اولیاؒء کے آستانے پہنچے -وہاں پہنچ کر میرے ذہن کو ایک زبردست جھٹکا لگا - میرے تصور کے بالکل برعکس دبلے پتلے ، نورانی چہرہ سفید مگر چھوٹی داڑھی -
ایک شاہانہ انداز سے پلنگ کے اوپر میرے حضور قلندر بابا اولیاؒء جلوہ افروز تھے - چہرے سے بےپناہ نرمی اور شفقت ٹپکتی تھی - میرے پیر و مرشد نے فرمایا کہ حضور یہ ہی ہیں ہمارے نسیم صاحب - حضور قلندر بابا اولیاؒء نے انتہائی پیار بھری مسکراہٹ سے مجھے دیکھا اور نہایت شفقت سے میرے سر پر ہاتھ رکھا  اور دعا فرمائی - آپ کی مسکراہٹ اتنی حسین اور پرشفیق تھی کہ وہ ہمیشہ کے لئے میرے ذہن میں نقش ہوگئی - میں آج بھی گاہے گاہے اس مسکراہٹ کے تصور سے ان کے پیار کا رس نچوڑتا رہتا ہوں -

میرے بابا جی تو اندر چلے گئے اماں جی سے ملنے اور قلندر بابا کے حضور میں اکیلا رہ گیا - میں نے حضور سے سوال کیا کہ تصوف کا کیا مطلب ہے ؟  آپ نے قدرے توقف کے بعد فرمایا ... " تصوف دراصل نور باطن ہے یعنی ایسا خالص ضمیر جس میں آلائش قطعاً نہ ہو ... " -  

حضور قلندر بابا اولیاؒء کے اس فرمان پر جب غور کیا تو الله کی طرف سے جو رہنمائی حاصل ہوئی وہ یہ ہے کہ ہر انسان کے اندر نور کا ایک نقطہ ہوتا ہے جو نوع انسانی کے لئے مشعل راہ ہے -
لیکن جب ہم دنیا کے اندر مستغرق ہوجاتے ہیں اور دنیا کی آلائشیں اپنے اندر بھرنا شروع کرتے ہیں تو یہ آلائشیں اس نقطہ نور کے سامنے ایک دبیز پردے کی شکل اختیار کرلیتی ہیں چونکہ آلائش نور کے اندر شامل نہیں ہوسکتی اس لئے نور اپنی جگہ برقرار رہتا ہے  اور برابر رہنمائی کرتا ہے - لیکن ہم صحیح رہنمائی حاصل نہیں کرپاتے کیونکہ ہماری سوچ اور ہماری فکر تک میں یہ آلائش شامل ہوچکی ہوتی ہے اس لئے ضمیر کی رہنمائی ہم تک اس آلائش میں سے آلودہ ہوکر پہنچتی ہے نتیجتاً ہم زندگی بھر بھٹکتے رہتے ہیں - 

ایک اور سوال کے جواب میں حضور قلندر بابا اولیاؒء نے فرمایا کہ ... " انسان کی یہ بڑی بدقسمتی ہے کہ وہ پیچھے پلٹ پلٹ کر دیکھتا رہتا ہے وہ یہ نہیں سوچتا کہ الله تعالیٰ نے آنکھیں اس کی پیشانی پر سامنے کی طرف کیوں دی ہیں - اگر پیچھے دیکھنا مقصود ہوتا تو الله کے لئے کیا مشکل تھا کہ وہ آنکھیں سر کے پچھلے حصے پر ہی لگا دیتے ... " - 

حضور قلندر بابا اولیاؒء کے اس فرمان کی وسعتیں اتنی ہیں کہ انہیں چند اوراق میں نہیں سمیٹا جاسکتا - مختصراً یہ کہ ہمارے سامنے تاریخ بکھری پڑی ہے - تمام انبیاء متقدمین جب تشریف لائے اور قوموں کو ہدایت دی تو سب نے پلٹ کر یہی جواب دیا کہ ہم آپ کی بات کیسے مان لیں جبکہ ہمارے بڑوں نے اس کے برعکس کہا اور کیا ہے -

یہاں غور طلب بات یہ ہے کہ وہ پیچھے پلٹ کر اپنے بزرگوں کی ہی نقش پا دیکھتے رہے انہوں نے اپنے سامنے سچائی کے اس پیکر کو نہیں دیکھا اس کی بزرگی اس کے اعمال کو نہیں دیکھا - نتیجتاً وہ خسارے میں رہے - لیکن جنہوں نے ماضی میں دیکھنے کے بجائے اپنے آپ کو حال سے منسلک کرلیا وہ فائدے میں رہے -  

میں ضمناً اس بات کا تذکرہ کرتا چلوں کہ مجھے پامسٹری کا بہت شوق تھا اور میں نے بےشمار ہاتھ دیکھے تھے لہٰذا حضور کا ہاتھ دیکھنے کی خواہش ایک قدرتی بات تھی - لیکن میں یہ گستاخی کیسے کرسکتا تھا - میری کسی طور ہمت نہیں پڑی کہ میں اپنی اس خواہش کا اظہار کرسکتا -
 لیکن میں نے دیکھا کہ حضور قلندر باباؒ نے پہلو بدلا اور اپنے دونوں ہاتھ اس انداز سے گود میں رکھ لئے کہ میں انہیں بآسانی پڑھ سکتا تھا - میں دور ہی سے اپنے شوق کی تسکین کرتا رہا - ایسا ہاتھ میں نے کبھی نہیں دیکھا بلا شک و شبہہ وہ ایک عالی مرتبت شہنشاہ کا ہاتھ تھا ایسا شہنشاہ جس کی حکومت کی حدود ایک حضیرے تک پھیلی ہوئی تھیں -   

 ان کے ہاتھ میں دماغ کی لکیر ایک مثالی لکیر تھی ایک سرے سے دوسرے سرے تک پھیلی ہوئی ، انتہائی گہری - ہاتھ میں  Mystic کراس اس بات کا اعلان ہے کہ روحانیت کاملیت کی حدوں کو چھو رہی ہے - ہاتھ میں دل کی لکیر کی لمبائی اور ساخت اس بات کا اشارہ ہے کہ دل کسی کے عشق میں گم ہے مدہوش ہے -

میرا یہ مشاہدہ ہے کہ یہ وصف دراصل عطا ہے اور ایسے لوگ الله اور اس کے رسول صلی الله علیہ وآ له وسلّم کے ہی نہیں بلکہ اس کی مخلوق کے بھی عاشق ہوتے ہیں - یہ لوگ محبت وعشق کا پیکر ہوتے ہیں - ان کی محبت سے حجر ، شجر ، چرند ، پرند اور جن و انس سب یکساں طور پر مستفیض ہوتے ہیں -

Sunday, June 29, 2014

قلندر بابا اولیاء -- شطرنج


قلندر بابا اولیاء رحمتہ الله علیہ کے مورث اعلیٰ حضرت فضیل مہدی سرزمین عرب کو چھوڑ کر خطہ مدراس میں وارد ہوئے - ان کے دو صاحبزادگان تھے - حضرت حسین مہدی رکن الدین اور حضرت حسن مہدی جلال الدین - اول الذکر حضور قلندر بابا اولیاؒء کے دادھیالی جد تھے اور موخر الذکر ننھیالی جد - 

چنانچہ بعد کے دادھیالی بزرگوں کے نام کے ساتھ حسین مہدی اور ننھیالی بزرگوں کے ساتھ حسن مہدی ضرور ہوتا تھا - اس روایت کو تاج الدین بابا اولیاءؒ نے جو آپ کے ننھیالی بزرگ تھے ، ترک کردیا - 

بابا تاج الدین نے شادینہیں کی تھی   لیکن آپ نے  قلندر بابا اولیاؒء کی والدہ محترمہ حضرت سعیدہ کو اپنی بیٹی بنا کر پرورش کیا - قلندر بابا اولیاؒء اسی نسبت سے  بابا تاج الدینؒ کو نانا کہا کرتے تھے -

الله تعالیٰ کے مقرب بندوں کو جب   سیدنا حضورعلیہ الصلوٰة والسلام روحانی طور پر تعلیمات دے کر فارغ کرتے ہیں تو ایک نام عطا فرماتے ہیں اور بعد میں اسی نام سے یاد فرماتے ہیں - 
   قلندر بابا اولیاؒء  کو آپ علیہ الصلوٰة والسلام  نے"حسن اخریٰ " نام عطا فرمایا - اس نام کی مناسبت قلندر بابا اولیاؒء کے ننھیالی  جدی نام  " حسن مہدی " سے بھی ہے -
 قلندر بابا اولیاؒء نے   بابا تاج الدینؒ  سے نو سال تک روحانی تعلیم حاصل کی - بابا تاج الدین ناگپوریؒ نے 17 اگست  1925ء کو اس دنیا سے پردہ فرمایا - وصال سے پہلے انہوں نے   قلندر بابا اولیاؒء  سے فرمایا کہ میرے بعد یہاں قیام نہ کرنا چنانچہ نانا کے پردہ کرنے کے بعد انہوں نے ناگپور جانا ترک کردیا -
آپ کو شاعری کے علاوہ پنجہ کشی اور شطرنج کھیلنے کا شوق تھا - شطرنج میں ان سے جیتنا محال تھا - قلندر بابااولیاؒء کو شطرنج کے دو سو نقشوں اور چار سو ضمنی نقشوں پر عبور تھا -
دہلی میں شطرنج کے دو مانے ہوئے استاد آپ کے پاس حاضر ہوتے تھے - ان میں سے ایک ذرا شوخ تھا - وہ اکثر آپؒ سے کھیلنے کی کوشش کرتا تو دوسرا کہتا کہ جب تمہیں معلوم ہے کہ تم چند چالوں سے زیادہ ٹھہر نہیں سکتے تو کیوں بار بار کھیلنے کی ضد کرتے ہو - وہ کہتا کہ اگر میں ان سے نہیں کھیلوں گا تو سیکھوں گا کیسے -
ایک مرتبہ وہ  آپؒ کے ساتھ کھیل رہا تھا ،  آپؒ نے چند چالوں کے بعد فرمایا کہ چوالیسویں چال کا تمہارے پاس کیا توڑ ہے - تھوڑی دیر غور کرنے کے بعد وہ بولا اچھا دوسری بازی لگاتے ہیں -

آپؒ   ( حضور قلندر بابا اولیاؒء)    نے ایک واقعہ بتایا - دہلی میں شطرنج کے آٹھ استاد تھے -  ایک کا انتقال ہوگیا - اسی زمانے میں یورپ سے ایک کھلاڑی نے آکر دہلی والوں کو مقابلے کی دعوت دی -

سات استادوں نے فیصلہ کیا کہ جو کھلاڑی اس انگریز کو ہرا دے گا وہ آٹھواں استاد تسلیم کرلیا  جائے گا - حکیم اجمل خان کا شمار بھی دہلی کے اچھے کھلاڑیوں میں  ہوتا تھا - لیکن وہ اس مقابلے کی ہمت پیدا نہ کرسکے 

چنانچہ انہوں نےاپنے  بھتیجے حکیم  محمّد  احمد کے ذریعے آپؒ سے درخواست کی کہ یہ مقابلہ آپؒ کریں - مقررہ دن اور وقت پر مقابلہ شروع ہوا - اس نے شروع ہی سے تیز چالیں چلنا شروع کردیں - آپؒ نے اس کے فیل کو گھیر کر مار دیا -

فیل کا اٹھنا تھا کہ اس کی تو بساط ہی الٹ گئی اور وہ بازی ہار گیا - بعد میں آپ نے بتایا کہ میں یہ سمجھ چکا تھا کہ اس انگریز نے فیل کی چالوں میں مہارت حاصل کر رکھی ہے چنانچہ میں نے سوچا کہ اگر اس کا فیل مار دیا جائے تو یہ حوصلہ ہار جائے گا چنانچہ میں نے ایسا ہی کیا -

 انؒ سے پوچھا گیا کہ آپؒ کو یہ اندازہ کیسے ہوا کہ یہ شخص فیل کی چالوں کا ماہر ہے -  آپؒ نے فرمایا جب وہ میرے سامنے بیٹھ کر چالوں پر غور کر رہا تھا تو میں نے اس کے گلے میں ایک زنجیر پڑی دیکھی اس زنجیر کے ساتھ ایک چھوٹا سا ہاتھی کا ماڈل لٹک رہا تھا - اس سے مجھے یہ خیال گزرا کہ یہ فیل کی چالوں کا ماہر ہے -

ایک دفعہ ناظم آباد میں ایک صاحب ملنے آئے - کہنے لگے میں نے سنا ہے کہ آپؒ شطرنج  بہت اچھی کھیلتے ہیں -  آپؒ نے فرمایا کہ عرصہ ہوا میں نے شطرنج کھیلنا چھوڑ دیا ہے - لیکن وہ مصر ہوگئے -  

آپؒ نے فرمایا اچھا میں اپنا وزیر اور دونوں رخ اٹھا لیتا ہوں اب آپ کسی بھی پیادہ پر انگلی رکھ  دیں میں اس سے آپ کو پیدلی مات دیدوں گا - وہ بے چارے شرمندہ ہوکر چلے گئے -


تحریر ...احمد جمال عظیمی            روحانی ڈائجسٹ ... جنوری  1995ء 

Saturday, March 8, 2014

تز کرہ ابدال حق امام سلسلہ عظیمیہ حضور قلندر بابا اولیاؒ : تین باتیں

تز کرہ ابدال حق امام سلسلہ عظیمیہ حضور قلندر بابا اولیاؒ : تین باتیں: ارشادات ، واقعات ، تعلیمات  اور  طرز فکر   عظیمی صاحب بتاتے ہیں میں نے حضور قلندر بابا اولیاؒء  سے ایک روز سوال کیا کہ سب ک...